بھوکے الوؤں کو بھگانے کے لیے چمگادڑیں آواز بدلتی ہیں

بھوکے الوؤں کو بھگانے کے لیے چمگادڑیں آواز بدلتی ہیں

روم، اٹلی: پہلی مرتبہ ہمیں معلوم ہوا ہے کہ چمگادڑیں حملہ آور الوؤں سے بچنے کے لیے اپنی آواز بدل کر ڈنک دار مکھیوں یا تتّیوں کی بھنبھناہٹ جیسی نقل اتارتی ہیں اگرچہ آواز یا شکل بدل کر دشمن کو ڈرانا یا اس سے بچنے کا ہنر اب تک کیڑے مکوڑوں میں ہی سامنے آیا ہے اٹلی میں واقع نیپلس فیڈریکو دوم یونیورسٹی کے سائنسداں ڈینیلو ریوسو نے کئی برس قبل چمگادڑ کی انوکھی بھنبھناہٹ سنی تھی جب وہ پی ایچ ڈی کر رہے تھے۔ جب جب وہ باہر نکلتی مکھیوں جسی آواز نکالتیں۔ اب انہوں نے اس مظہر کا بغور جائزہ لیا ہے۔انہوں نے چوہے جیسے کان والی ایک مشہور چمکادڑ(مایوٹِس مایوٹِس) کی ریکارڈنگ سنیں جو (شہد کی) مکھیوں اور تتّلیوں جیسی تھیں۔ جب جب چمگادڑ کی آواز کسی الو سے ٹکرا کر واپس آئی تو وہ آواز مکھیوں کے مزید قریب ہوتی چلی گئی۔۔ اسپیکر قریب لاکر ہر الو کو چار مختلف آوازیں سنائی گئیں۔ اول، چمگادڑ کی اصل آواز، دوسری آواز جس میں وہ مکھیوں کی نقل کر رہی تھی، ۔تینوں اقسام کی بھنبھناہٹ سن کر سارے الو ایک دم پیچھے ہٹ گئے اور جیسے ہی انہوں نے چمگادڑ کی اصل آواز سنی وہ اسپیکر کے قریب آگئے۔ان میں سے کچھ الوؤں کا ردِ عمل مختلف بھی تھا اور وہ بھنبھناہٹ سن کر بہت زیادہ ڈرے تھے شاید ماضی میں انہیں کسی مکھی یا ڈنک دار کیڑے نے کاٹا ہوگا یا ان کی یادداشت میں ایسا کوئی واقعہ تازہ ہوسکتا ہے۔