سندھ میں پانی کی شدید کمی، سکھر بیراج پر صورت حال خوفناک

سندھ میں پانی کی شدید کمی، سکھر بیراج پر صورت حال خوفناک

سکھر: سندھ میں پانی کی قلت خوفناک صورت حال اختیار کرگئی ہے۔تفصیلات کے مطابق سندھ میں نہری پانی کی قلت کے باعث صورت حال خطرناک ہوتی جارہی ہے جس کے باعث گڈو بیراج پر پانی کی کمی 91 فیصد جبکہ سکھر بیراج پر 48 فیصد سے تجاوز کرگئی ہے۔انچارج کنٹرول روم سکھر بیراج نے تصدیق کی ہے کہ سندھ میں پانی کی مجموعی کمی 57 فیصد ہوگئی جبکہ کوٹری بیراج پر پانی کی کمی 69 فیصد ہوگئی ہے۔انچارج کنٹرول روم عبدالعزیز سومرو کا کہنا ہے کہ گڈو بیراج پر پانی کی سطح میں 7 ہزار کیوسک کا اضافہ ہوا ہے جبکہ دریائے سندھ میں سکھر بیراج پر پانی کی سطح میں 2 ہزار کیوسک کا اضافہ ہوا ہے۔سکھر بیراج کے انچارج کنٹرول روم کے مطابق گڈو بیراج سے گھوٹکی کینال اور پٹ فیڈر کینال کو کھول دیا گیا ہے جس میں 270 کیوسک اور پٹ فیڈر کینال میں 350 کیوسک پانی چھوڑا جارہا ہے۔عبدالعزیز سومرو نے کہا کہ گڈو بیراج سے نکلنے والی بیگاری کینال تاحال بند ہے، رائس کینال اور دادو کینال کو بھی سکھر بیراج سے بند رکھا گیا ہے۔انہوں نے بتایا کہ دریائے سندھ میں پانی کی سطح کچھ بہتر ہوئی ہے، گڈو بیراج پر پانی کی سطح 44 ہزار کیوسک سے زائد ہے جبکہ سکھر بیراج پر پانی کی سطح 33 ہزار کیوسک سے زائد ہے اور کوٹری بیراج پر پانی کی 51 سو کیوسک ہے۔