ہیلی کاپٹر حادثے کے بعد سوشل میڈیا پر چلنے والی مہم افسوسناک ہے، آئی ایس پی آر

آئی ایس پی آر کا کہنا ہے کہ سوشل میڈیا پر ہیلی کاپٹر حادثے میں شہید ہونے والوں کے خلاف چلائی جانے والی مہم ناقابل قبول ہے۔پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ (آئی ایس پی آر) کے مطابق لسبیلہ ہیلی کاپٹر حادثے کے بعد سوشل میڈیا پر چلائی جانے والی مہم افسوسناک ہے، منفی سوشل میڈیا مہم کے باعث شہداء کے لواحقین کی دل آزاری ہوئی۔ترجمان پاک فوج کا کہنا تھا کہ ہیلی کاپٹر حادثے کے بعد سوشل میڈیا پر چلنے والی منفی مہم کے باعث شہداء کے لواحقین اور پاک فوج میں شدید غم و غصہ پایا جاتا ہے۔سوشل میڈیا پر مہم ناقابل قبول ہے.آئی ایس پی آر نے بتایا کہ پوری قوم اس مشکل گھڑی میں مسلح افواج کے ساتھ کھڑی ہوتی ہے تاہم کچھ بے حس حلقوں کی جانب سے سوشل میڈیا پر تکلیف دہ اور توہین آمیز مہم چلائی گئی، سوشل میڈیا پر مہم ناقابل قبول اور قابل مذمت ہے۔
نجی ٹی وی کے پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے ڈی جی آئی ایس پی آر میجر جنرل بابر افتخار نے کہا کہ یکم اگست کو ہیلی کاپٹرکا افسوسناک حادثہ ہوا، ہیلی کاپٹر فلڈ ریلیف کی کارروائیوں میں مصروف تھا اور کور کمانڈر لیفٹیننٹ جنرل سرفرازعلی خود فلڈ ریلیف کی نگرانی کررہے تھے۔ترجمان پاک فوج کا کہنا تھا کہ لسبیلہ کے قریب موسم کی خرابی کے باعث ہیلی کاپٹر حادثے کا شکار ہوا لیکن اس سانحے کے بعد سوشل میڈیا پر پروپیگنڈا شروع ہوا، یہ پروپیگنڈا اور اس طرح کی قیاس آرائیاں کرنا بہت ہی حساس تھا۔پاکستان کی زمین استعمال ہونے کا سوال ہی نہیں پیدا ہوتا.ایک سوال کے جواب میں ڈی جی آئی ایس پی آر نے کہا کہ القاعدہ کے سربراہ ایمن الظواہری واقعے پر وزارت خارجہ نے بہت واضح بیان جاری کردیا ہے جس کے بعد سوال ہی پیدا نہیں ہوتا کہ پاکستان کی زمین استعمال ہوئی ہو۔میجر جنرل بابر افتخار کا کہنا تھا کہ سوشل میڈیا پر اس طرح کی چیزوں سے اجتناب کرنا چاہیے ، جس کا جو دل کرتا ہے وہ لکھ دیتا ہے، جس بات کے کوئی ثبوت نہیں ہوتے اس کا نقصان صرف اور صرف ملک اور قوم کا ہوتا ہے۔