پی ٹی آئی کے تین سال

تحریر:محمد رمضان

پی ٹی آئی کے تین سالوں میں حکمران خوش، عوام مزید خوار ہوئے،یہ تین سال پاکستان کی تاریخ کے انتہائی ناقص پالیسیوں،نااہلی اور ریکارڈ کرپشن کیلئے یاد رکھے جائیں گے۔کرپشن میں پاکستان نیچے گیا، اظہار رائے کی آزادی انڈیکس میں نیچے چلا گیا، دو سال میں مزید تنزلی بھی ہوگی۔پاکستان میں صحافت پر جتنی پابندیاں اس وقت ہیں، آمرانہ دور میں بھی نہیں دیکھی گئیں۔نیب کو صرف اپوزیشن رہنمائوں کو ہدف بنا کر استعمال کیا گیا اور الزام تراشی کا سلسلہ روزاول سے جاری ہے۔پی ٹی آئی کی حکومت کے تین سالہ دورِ حکومت میں 86 لاکھ لوگ بیروز گار ہوئے اور 25 ٪ یعنی 5.5 کروڑ لوگ غربت کی لکیر سے نیچے چلے گے پہلے دو سال میں شرح سود 4٪ سے بڑھا کر 13٪ پر لے گے جس کی وجہ سے ارب پتی اور کروڑوں پتی لوگوں نے سرمایا بنکوں میں رکھ کر کروڑوں اور اربوں مزید کمائے جس سے 30٪ لوگوں کی جیبوں میں مزید سرمایہ چلا گیا،تیسرے سال میں شرح سود کم کر کے 7٪ پر لے گے اور ساتھ ہی real estate کا کاروبار کرنے والوں کو سرمائے کی سہولت میسر کی جس کی وجہ سے کنسٹرکشن میٹریل یعنی سریا 70 ہزار ٹن سے اس وقت ایک لاکھ 65 ہزار ٹن اور سیمنٹ 700 روپے بیگ پٹرول تاریخ کی بلند ترین سطح پر سی این جی میسر نہیں ہے،ان تین سالوں میں کارکردگی کا معیار یوٹرن رہا اور زیادہ یوٹرن لینے والا سب سے بڑا لیڈر قرار پایا،دوائیوں کی قیمتیں بڑھیں کسی کو سزا نہیں ہوئی، چینی مہنگی کی گئی، کوئی سزا نہیں ہوئی،صرف فارن فنڈنگ کیس کا فیصلہ ہوجائے تو پی ٹی آئی کا نام و نشان نہیں رہے گا،بی آر ٹی، مالم جبہ، بلین ٹری سونامی، چینی آٹا چوری سکینڈل، رنگ روڈ سکینڈل، ایل این جی سکینڈل اور نہ جانے کتنے سکینڈلز پر کوئی کارروائی نہیں ہوئی،پی ٹی آئی نے اپنے وزراء کو بچانے کیلئے پورا زور لگایا جس کا نقصان عوام کو اٹھانا پڑ رہا ہے،مہنگائی کا طوفان رکنے کا نام نہیں لے رہا اور اس وقت بلندترین سطح پر ہے،خارجہ و داخلہ پالیسی مکمل طور پر ناکام رہی، نیشنل ایکشن پلان پر کوئی عمل نہیں ہوا،امن کیلئے کردار ادا کرنا ہوگا،ماضی کی طرح پالیسیاں بنائی گئیں تو عوام ان حکمرانوں کو کبھی معاف نہیں کریں گے،

starasianews

Read Previous

یکساں نصاب تعلیم

Read Next

وزیر اعظم کی زیر صدارت تحریک انصاف پارلیمانی پارٹی کا اجلاس